ایم پی اے کا ذاتی فیکٹری کے لیےسرکاری وسائل کا استعمال

ساہیوال (بیورورپورٹ)لیگی ایم پی اے اپنی فیکٹری کے نکاس کیلئے سرکاری فنڈز استعمال کرنے لگا ‘حکم امتناعی کے باوجود سڑک اکھاڑ کر پائپ ڈالنے پر مزارعین کا شدید احتجاج ‘ ڈسپوزل کا گائوں کے نکاس سے کوئی تعلق نہ ہے ۔ ایم پی اے ذاتی نکاس کیلئے ڈسپوزل بنا رہاہے ‘مزارعین کا احتجاج کرتے ہوئے موقف ۔ ایم پی اے نے فون نہ سنا ۔ تفصیلات کے مطابق چک نمبر 89/9-Lمچھلی پال فارم کے قریب لیگی ایم پی اے محمدارشد ملک نے سپریم ہائوس کے نکاس کیلئے ایک سرکاری محکمہ سے سرکاری رقبہ پر سیوریج ڈسپوزل بنوا لیا جس پر مزارعین دلاو ر حسین اور ظفر اقبال ودیگر نے شدید احتجاج کرتے ہوئے ڈپٹی کمشنر اور محکمہ ماحولیات کو درخواستیں دیں لیکن کوئی کارروائی نہ کی گئی ۔مزارعین نے بتایا کہ انہوںنے عدالت سے حکم امتناعی بھی لیا لیکن گزشتہ رات ایم پی اے کی آشیر باد پر پختہ سڑک اکھاڑ کر پائپ ڈال دیئے ۔انہوںنے کہاکہ قیام پاکستان سے لیکر اب تک ان کے آبائو اجداد مذکورہ سرکاری رقبہ کو کاشت کر رہے ہیں اس پر ڈسپوزل بنانا ہمارے ساتھ ظلم ہے۔ مذکورہ ڈسپوزل کا گائوں 89/9-Lکے نکاس سے کوئی تعلق نہ ہے یہ صرف سپریم ہائوس کے نکاس کیلئے اقدام اٹھایا جارہاہے ۔ اس سلسلہ میں ارشد ملک سے فون پر رابطہ کیا گیا توانہوں نے فون نہ سنا جبکہ ان کے بھائی ملک شاہد کا کہنا تھا کہ یہ ڈسپوزل گائوں کے نکاس کیلئے بنا یا ہے جو سرکاری رقبہ پر ہے اورناجائز نہ ہے ۔ مزارعین نے شدید احتجاج کرتے ہوئے کمشنرساہیوال اور ماحولیات کے اعلیٰ افسران سے نوٹس لینے کامطالبہ کیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں