سیکرٹری زراعت محکمہ زراعت ساہیوال پر برہم

ساہیوال (ایس این این ) سیکرٹری زراعت پنجاب محمد محمودنے ساہیوال ڈویژن کے زرعی شعبہ جات کی غیر تسلی بخش کارکردگی پربرہمی کا اظہار کرتے ہوئے ذمہ دارٖافسران کو آخری وارننگ دیتے ہوئے کہا کہ وہ اپنا قبلہ درست کر لیں بصورت دیگر انہیں سخت نتائج بھگتنا پڑیں گے۔ افسران کی کارکردگی میں بہتری لانے کیلئے تمام شعبہ جات کے ہیڈز ساہیوال ڈویژن کا باقاعدگی سے دورہ کریںاوراپنے دفاتر کی کارکردگی کو مانیٹر کریں۔کپاس کی پیداوار میں کمی کی بڑی وجہ متعلقہ شعبہ جات کی کاشتکاروں کو سروس ڈلیوری میں سستی یا کوتاہی کا عمل دخل ہے۔آلو کی ایکسپورٹ میں اضافہ کی خاطرسیمینار کا انعقادکرایا جائے ۔پیسٹی سائیڈز انسپکٹرز و فرٹیلائزرکنٹرولرزجعلی زرعی ادویات وغیر معیاری کھادوں کے گھنائونے کاروبار میں ملوث عناصر کی بیخ کنی کیلئے کاروائیاں تیزکریںکیونکہ محکمہ زراعت اس ضمن میںزیرو ٹالرنس پالیسی پر عمل پیرا ہے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے میظ اینڈ ملٹ ریسرچ انسٹیٹیوٹ میںساہیوال کے ڈویژنل اور ڈسٹرکٹ ہیڈز کے ساتھ مالی سال 2017-18 کی پہلی ششماہی کی کارکردگی کے جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میںمختلف شعبہ جات کے ڈپٹی ڈائریکٹرز ، اسسٹنٹ ڈائریکٹرزو شعبہ تحقیق کے افسران نے شرکت کی۔ سیکرٹری زراعت نے کہا کہصوبہ بھر میں یکم اپریل سے پہلے کپاس کی کاشت پر مکمل پابندی عائدکردی ہے لہٰذا کسی بھی کاشتکار کو یکم اپریل سے پہلے کپاس کاشت کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دی جائے گی۔پیسٹ وارننگ اور توسیع کے افسران انڈسٹری کے ساتھ مل کر کپاس کی آف سیزن مہم بھر پور انداز میں چلائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں