پاکپتن، یونیورسٹی آف لاہور پاکپتن کیمپس کا این او سی منسوخ

پاکپتن (بیورورپورٹ) ہائر ایجوکیشن کمیشن نے یونیورسٹی آف لاہور کے پاکپتن کیمپس کو این او سی دینے سے انکار کرتے ہوئے نئے داخلے کرنے سے روک دیا ہے۔یہ انکار کیمپس کی طرف سے ایچ ای سی کی طرف سے مقرر کردہ معیار پر پورا نہ اترنے اور قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی کرنے پر کیا گیا۔کیمپس نے کمشنر ساہیوال ڈویژن کو طلبا و طالبات کے مفاد کو یقینی بنانے کیلئے بھی درخواست کر دی ہے۔تفصیلات کے مطابق ہائر ایجوکیشن کمیشن کی ایکریڈیشن اور انسپکشن کمیٹی نے یونیورسٹی آف لاہور کے پاکپتن کیمپس کا14ستمبر 2018 کو تفصیلی دورہ کیا جس دوران قواعد و ضوابط کی سنگین خلاف ورزیاں پائی گئیں جن پر کیمپس نے لیٹر نمبر15(40)/A&A/Acc./HEC-2015/1420 dated 29.10.2018کے تحت کیمپس کو این او سی جاری کرنے سے انکار کرتے ہوئے نئے داخلے کرنے سے منع کر دیا ہے۔کمیٹی نے کہا کہ یونیورسٹی نے گورنر پنجاب کی منظوری کے بغیر کیمپس کھولا جبکہ مختلف شعبوں میں پروفیسرز‘ایسوسی ایٹ پروفیسرز اور اسسٹنٹ پروفیسر ز کی بھی شدید کمی ہے جو کہ کسی بھی شعبے میں تعلیمی سرگرمیوں کو جاری رکھنے کیلئے بے حد ضروری ہے اسی طرح یونیورسٹی نے ہائر ایجوکیشن کمیشن کے کوالٹی ڈویژن سے بھی این او سی نہیں لیا اور کیمپس کیلئے ضروری ہے کہ ساڑھے تین ایکڑ زمین کیمپس کے نام ہو جس پر ایچ ای سی نے قواعد و ضوابط کو پورا کرنے تک نئے داخلوں سے روک دیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں