نیلم ویلی پل حادثہ، ساہیوال اور فیصل آباد کے طلبا بھی لاپتا

مظفرآباد(ایس این این) وادی نیلم میں نالہ جاگراں پر کنڈل شاہی پل ٹوٹنے سے 40 سے زائد سیاح دریائے نیلم کے ’نالہ جاگراں‘ میں جاگرے 8 افراد کی لاشیں برآمد،باقیوں کی تلاش جاری ہے۔ذرائع کے مطابق مظفر آباد میں وادی نیلم میں خستہ حال کنڈل شاہی پل ٹوٹ گیا جس کے باعث پل پر کھڑے سیاح نالہ جاگراں میں گرگئے۔ ڈوبنے والے پانچ افراد کا تعلق فیصل آباد کے نجی کالج سے تھا. پل ٹوٹنے کے وقت ساہیوال میڈیکل کالج کے کچھ طلبا کے موجود ہونے کی اطلاعات ہیں. ساہیوال سے جانے والے طلبا کا تعلق ساہیوال میڈیکل کالج کی فورتھ ائیر سے تھا. ذرائع کے مطابق ڈوبنے والے ان پانچ طلبا کی لاشیں نکال لی گئی ہیں۔ جب کہ 6 افراد کو زندہ بچالیا گیا ہے جب کہ باقی لاپتہ سیاحوں کی تلاش کے لیے امدادی اداروں کی کارروائیاں جاری ہیں۔ دریا کا بہاؤ انتہائی تیز ہونے کی وجہ سے مزید ہلاکتوں کا خدشہ ہے۔پولیس کا کہنا ہے کہ پل پر خواتین اور بچوں سمیت 40 سے زائد سیاح کھڑے تھے کہ اچانک پل ٹوٹ گیا اور تمام لوگ نالے میں بہہ گئے۔بہنے والوں میں ساہیوال میڈیکل کالج کی ریشم، امتل اور آمنہ بھی شامل ہیں. نالہ جاگراں بلندی سے نیچے اترنے والا انتہائی تیز رفتار نالہ ہے جس میں پانی بہت تیز رفتاری سے بہتا ہے لہٰذا گرنے والے سیاحوں کےبچنے کی امید بہت کم ہے۔ ڈپٹی کمشنر نیلم راجہ شاہد محمود کا کہنا ہے کہ خستہ حال پل گنجائش سے زیادہ افراد کا بوجھ برداشت نہ کرسکا اور ٹوٹ گیا۔اس ضمن میں ایک کنٹرول روم قائم کیا گیا ہے .05822920097 پر رابطہ کر کے اس سلسلہ میں معلومات لی جا سکتی ہیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں