اتحادی فوج کا شام کے فوجی ٹھکانوں‌پر حملہ

دمشق(ویب نیوز) شامی حکومت کی جانب سے عوام پر کیمیائی حملوں کو جواز بناتے ہوئے امریکا، برطانیہ اور فرانس نے شام پر حملہ کردیا.بین الاقوامی میڈیا کے مطابق شام میں بشارالاسد کی حکومت کی جانب سے نہتے عوام پر ہونے والے کیمیائی حملوں کی آڑ میں امریکا، برطانیہ اور فرانس نے شام پر میزائل حملے کیے ہیں۔ان حملوں میں بی ون بمبار لڑاکا طیاروں اور بحری جہازوں نے حصہ لیا.اتحادیوں‌کی جانب سےشام کی کیمیائی ہتھیاروں کی تنصیبات کو نشانہ بنایا گیا۔اتحادی فوج کی جانب سے شامی فوج کے ٹھکانو‌ں‌پر کئی میزائلز فائر کیے گئے۔ عینی شاہدین کے مطابق دمشق میں 6 زوردار دھماکے ہوئے.شامی فوج کے ذرائع نے میڈیا کو بتایا کہ امریکی حملے میں30 کے قریب میزائل داغے گئے مگر کوئی جانی نقصان نہیں ہوا کیونکہ روس کی جانب سے ان حملوں کی پیشگی اطلاعات کے باعث شامی فوج پہلے سے تیار تھی۔
امریکی ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ شام میں کیمیائی و حیاتیاتی ہتھیار بنانے والے مرکز، کیمیائی ہتھیاروں کےگودام اور ایسے اہداف کو نشانہ بنایا جہاں روسی فوج موجود نہیں تھی۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے قوم سے خطاب میں حملے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ امریکا، برطانیہ اور فرانس کا مشترکہ آپریشن کیا جارہا ہے، اس کارروائی کا مقصد کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری، پھیلاؤ اور استعمال کو سختی سے روکنا ہے، ہم یہ کارروائی اس وقت تک جاری رکھیں گے جب تک شامی حکومت ممنوعہ کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال نہیں روکتی۔ ٹرمپ نے شام کے صدر بشار الاسد کے کیمیائی حملوں کے بارے میں کہا کہ یہ کسی انسان کا کام نہیں ہے بلکہ شیطان کے جرائم ہیں، میں روس اور ایران سے پوچھتا ہوں کہ کون سا ملک معصوم مردوں، عورتوں اور بچوں کے قتل عام میں ملوث ہونا چاہے گا۔
امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس نے بتایا ہے کہ شام کی خانہ جنگی کے خاتمے کیلیے مہذب قوموں کے متحد ہونے کا وقت آگیا ہے، شام پر صرف ایک بار حملہ کیا گیا ہے اور مزید حملوں کا منصوبہ نہیں، اس اقدام کا مقصد شامی صدر بشارالاسد کو سخت پیغام دینا ہے کہ آئندہ کیمیائی حملوں سے باز رہے، پہلا حملہ دمشق میں ایسے سائنسی فوجی مرکز پر کیا گیا جہاں کیمیائی اور حیاتیاتی ہتھیاروں پر تحقیق، تیاری اور تجربات کیے جاتے تھے، دوسرے حملے میں حمص کے مغرب میں کیمیائی اسلحے کی ذخیرہ گاہ کو نشانہ بنایا گیا جہاں سارن گیس تیار کی جاتی تھی
شام کے صدر بشار الاسد نے حملے کو بین الاقوامی قوانین کی کھلی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔ شام کے سرکاری ٹی وی پر جاری کردہ بیان کے مطابق شامی فضائیہ نے دشمن کے 13 میزائلز کو تباہ کردیا ہے۔روس نے ردعمل میں کہا ہے کہ امریکا عالمی قوانین کی خلاف ورزی کررہا ہے، شام پر حملہ کھلی جارحیت ہےجس کا نتنیجہ خطرناک ہو گا۔ روسی حکام نے ٹرمپ کو ہٹلر قرار دیا ہے۔برطانیہ کے مطابق حملوں کا مقصد شامی حکومت کا تختہ الٹنا نہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں