چیچہ وطنی: 8 سالہ طالبہ زیادتی کے بعد زندہ جلا دی گئی

چیچہ وطنی: ساہیوال کی تحصیل چیچہ وطنی کے علاقے محمد آباد میں دوسری جماعت کی 8 سالہ طالبہ کو نامعلوم افراد نے جنسی زیادتی کے بعد زندہ جلا ڈالا.بچی کےجسم کا 80 فی صد حصہ جھلسنے پر جناح ہسپتال منتقل کیا گیا تھا جہاں وہ جان کی بازی ہار گئی. تفصیل کے مطابق اتوار کو محمد آباد کے رہائشی محمد عاشق کی آٹھ سالہ بیٹی نور فاطمہ دکان سے کوئی چیز لینے گئی اور واپس نہ آئی. کچھ دیر بعد محلے کی خواتین نے بچی کو جلی ہوئی حالت میں دیکھ کر محمد عاشق کے گھر اطلاع دی.بچی کے جسم کا 80 فی صد حصہ جل چکا تھا اسے جناح ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ دم توڑ گئی. ابتدائی طبی رپورٹ کے مطابق بچی کو جلانے سے قبل اس سے جنسی زیادتی کی گئی ہے تاہم اس کا حتمی فیصلہ فرانزک رپورٹ کی مدد سے ہو گا. نوعمر طالبہ سے جنسی زیادتی اور جلانے کے واقعے سے علاقے کے عوام میں اشتعال پایا جاتا ہے. اس ضمن میں آج انجمن تاجران کی کال پر چیچہ وطنی میں شٹر ڈاؤن ہڑتال کی گئی. چیچہ وطنی کے تمام سکولز اور کالجز بند رہے. انجمن تاجران نے اعلیٰ حکام سے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے ملوث افراد کی گرفتاری کا مطالبہ کیا. واقعے کی اطلاع ملتے ہی ڈی پی او ساہیوال و دیگر حکام موقع پر پہنچ گئے. وزیر اعلیٰ پنجاب نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے پولیس کو ملزمان کی فوری گرفتاری کا حکم دیا ہے. قبل ازیں پولیس نے محلے کے آتش بازی فروخت کرنے والے معذور دکان دار کو حراست میں لے لیا جس سے شک کی بنا پر پوچھ گچھ جاری ہے. لڑکی کے والد نے چیف جسٹس ، وزیر اعلیٰ اور دیگر حکام سے انصاف کی فراہمی کا مطالبہ کیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں