جامعہ نعیمیہ میں نواز شریف پر جوتے سے حملہ

لاہور(ویب نیوز) سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف پر جامعہ نعیمیہ لاہور کی ایک تقریب کے دوران جوتے سے حملہ کر دیا گیا۔ ٹی وی رپورٹس کے مطابق کے سابق وزیر اعظم نواز شریف جامعہ نعیمیہ میں ایک تقریب میں شریک تھے۔ جب وہ خطاب کیلئے ڈائس پر پہنچے تو اس دوران ہال میں کے موجود شخص نے ختم نبوت زندہ باد کے نعرے لگاتے ہوئے ان پر جوتا اچھال دیا۔جوتا نواز شریف کے کندھے پر جا لگا.اس واقعے سے ہال میں بھگدڑ مچ گئی. حملہ کرنے والے کو حراست میں لے لیا گیا ۔ جوتے سے حملہ ہوتے ہی سکیورٹی اہلکاروں نے ڈائس کو گھیرے میں لے لیا اور جوتا اچھالنے والے شخص کو تشدد کا نشانہ بناتے ہوئے ہال سے باہر لے گئے۔

عمران خان ، بلاول زرداری اور دیگر سیاسی رہنماؤں نے اس عمل کو غیر سیاسی اور قابل مذمت قرار دیتے ہوئے کہاکہ نوازشریف پر جوتا پھینکنا غیر سیاسی رویہ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ان کے مسلم لیگ (ن) اور نواز شریف کے ساتھ سیاسی اختلافات درست ہیں لیکن اس طرح کی حرکتوں کی روک تھام ضروری ہے۔تحریک انصاف کے رہنما فواد چوہدری کے مطابق خواجہ آصف پر سیاہی پھینکنے کا عمل اور سابق وزیراعظم نوازشریف پر جوتا پھینکنے کے عمل میں شدت پسند عناصر ملوث ہیں۔شیخ رشید نے بھی نواز شریف پر جوتا لگنے کے واقعے کو غیر سیاسی عمل قرار دیا۔ شیخ رشید احمد کا کہنا تھا کہ اس وقعے سے نواز شریف کی بے عزتی ہوئی ہے، تاہم وہ اس حرکت کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔
پاکستان میں سسیاسی شخصیات پر اس طرح حملوں کی شدت میں اضافہ ہو رہا ہے. احمد رضا قصور ی، شیخ رشید احمد ، شہباز شریف ، خواجہ آصف اور نواز شریف ایسے حمولوں کا شکار ہو چکے ہیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں