ڈینگی پر قابو پانے کے لیے پنجاب سے بھیجا گیا ڈاکٹر خود شکار ہو گیا

پشاور: خیبرپختونخوا میں ڈینگی کے مرض میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے اور صورت حال یہاں تک جاپہنچی ہے کہ پشاور میں ڈینگی کے خاتمے کیلئے آنے والا ڈاکٹر خود خطرناک مرض کا شکار ہوگیا۔
ایکسپریس نیوز کے مطابق خیبرپختونخوا میں ڈینگی عفریت کی شکل اختیار کرگیا ہے، پشاور میں ڈینگی سے متاثرہ افراد کی تعداد ایک ہزار سے تجاوز کرگئی ہے، پشاور کے علاقے تہکال میں ڈینگی کے مرض پر قابو پانے کیلئے آنے والا ڈاکٹر عابد خود ڈینگی کے مرض کا شکار ہوگیا۔
پنجاب ہیلتھ یونٹ کے مطابق ڈاکٹر عابد پشاور کے علاقے تہکال میں ڈینگی کے خاتمے کیلئے تعنیات ہوئے تھے لیکن خود ڈینگی کا شکار ہوگئے ،جس کے باعث وہ اپنے آبائی علاقے میانوالی واپس چلے گئے ہیں ،ذرائع کے مطابق میڈیکل رپورٹس میں ڈاکٹر عابد کو ڈینگی کے مرض کی تصدیق ہوگئی ہے جس کے باعث انہیں پنجاب بھجوادیا گیا ہے۔دوسری جانب پنجاب ہیلتھ یونٹ کے انچارج ڈاکٹر فاروق سلطان کا کہنا ہے کہ ڈاکٹرعابد کو ڈینگی نہیں بلکہ ملیریا ہوا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ ڈاکٹروں کے شب و روز ڈینگی اور ملیریا سے متاثرہ مریضوں کے درمیان گزرتے ہیں لہٰذا فرائض منصبی کی انجام دہی کے دوران ڈینگی یا ملیریا ہونا کوئی بڑی بات نہیں۔واضح رہے کہ پشاور میں ڈینگی سے متاثرہ مریضوں کی تعداد میں آئے روز اضافہ ہورہا ہےا ور اب تک 1000 سے افراد میں ڈینگی کے وائرس کی تصدیق ہوچکی ہے ، چند روز قبل محکمہ صحت پنجاب نے صوبے کے ماہر ڈاکٹروں کو پشاور بھیجنے کا فیصلہ کیا تھا ۔جب کہ کے ٹی ایچ انتظامیہ نے اس بات کی تصدیق کی تھی اسپتال میں اس وقت ڈینگی کے سب سے زیادہ مریض موجود ہیں جن کی تعداد 150 سے زائد ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں