فرزانہ طلعت، سرکاری گاڑی کا کاروباری استعمال

ساہیوال(دلاور سلطان سے)فرزانہ طلعت ایجوکیشن اتھارٹی کو آنکھیں دکھانے لگیں، قانون بے بس،معلومات تک رسائی کے قانون کے تحت مانگی گئی معلومات فراہم کرنے سے انکار،ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹی کے احکامات ردی کی ٹوکری کی نذر۔سابق ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسر(وویمن ) فرزانہ طلعت اپنے عرصہ تعیناتی کے دوران سرکاری گاڑی نمبری SLG-34 کے غیر قانونی استعمال میں ملوث پائی گئیں۔سرکاری گاڑی سبز نمبر پلیٹ کے ساتھ باراتیں لیجانے کیلئے کرایہ پر دستیاب رہی،معمولی معاوضہ پر ڈرائیونگ سیکھنے کے خواہشمند بھی مستفید ہوتے رہے۔شہری دلاور سلطان نے شفافیت اورمعلومات تک رسائی کے قانون 2013ء آرٹیکل 19-Aکے تحت میڈم فرزانہ طلعت سے یکم جنوری 2015تا31جنوری 2016تک سرکاری گاڑی کے استعمال،مرمت،اخراجات بارے معلومات طلب کیں۔ایک سال سے زائد کا عرصہ گزرجانے پر بھی فراہم نہیں کی جارہیں۔سی ای او ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹی نے مسز فرزانہ طلعت سمیت ان کے ادارہ کی پرنسپل گورنمنٹ گرلز ہائرسیکنڈری سکول 73پانچ،ایل کو ایک بارپھرہدایت کی ہے کہ اندرمعیاد تین یوم مطلوبہ معلومات درخواست دہندہ سمیت ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹی کو فراہم کی جائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں