کمشنر کی زیر صدارت ڈی پی ایس گورننگ باڈی کا اجلاس

ساہیوال(بیورورپورٹ )کمشنر ساہیوال ڈویژن علی بہادر قاضی نے کہا ہے کہ نوجوان نسل کی بہتر تربیت اور انہیں مستقبل کے چیلنجز کا سامنا کرنے کے قابل بنانے کیلئے معیاری تعلیمی اداروں کا اہم کردار ہے اور اساتذہ کو چاہیے کہ وہ تعلیم کیساتھ ساتھ تربیت پر بھی خصوصی توجہ دیں ۔انہوں نے یہ بات ایجوکیشنل ٹرسٹ کے بورڈ آ ف ٹرسٹیز کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی جو ڈی پی ایس ساہیوال میں منعقد ہوا ۔اجلاس میں ڈپٹی کمشنر شوکت علی کھچی‘ڈپٹی کمشنر پاکپتن عرفان احمد سندھو‘ ایڈیشنل کمشنر میاں جمیل احمد اور پرنسپل بریگیڈئر (ر) سید انوارالحسن کرمانی کے علاوہ بورڈ کے ممبران نے بھی شرکت کی ۔انہوں نے ڈی پی ایس کی نصابی اور ہم نصابی سرگرمیوں کو سراہا اور پرنسپل کو ہدایت کی کہ اس معیار کو برقرار رکھنے میں کوئی دقیقہ فروگذاشت نہ کیا جائے ۔اجلاس میں بتایا گیا کہ اگلے تعلیمی سال سے پاکپتن اور عارف والا میں قائم ڈی پی ایس بھی ساہیوال ایجوکیشن ٹرسٹ کے تحت کام کرینگے اور ان اداروں کے سلیبس کو بھی اپ ڈیٹ کیا جائیگا ۔کمشنر نے تعلیمی اداروں میں طلبہ کی طرف سے بڑھتی ہوئی سموکنگ اور دوسری نشہ آور اشیاء کی شکایات کا سختی سے نوٹس لیا اور تمام سرکاری و نجی تعلیمی اداروں کے سربراہان کو ہدایت کی کہ وہ اس رجحان کی سختی سے حوصلہ شکنی کریں اور ان غیر اخلاقی سرگرمیوں میں ملوث طلبہ کیخلاف کارروائی کریں ۔اجلاس میں حکومت کی طرف سے تنخواہوں میں ہونیوالے 10فیصد اضافے کے پیش نظر نئے تعلیمی سال سے سکول کی فیسوں میں دس اور کالج کی فیس میں 5فیصد اضافے کا فیصلہ کیا گیا ۔کمشنر نے اجلاس میں سکول کے سکیورٹی انتظامات کا تفصیلی جائزہ لیا اور اسے تسلی بخش قرار دیا ۔ پرنسپل بریگیڈئر (ر) انوارالحسن کرمانی نے اجلاس کو بتایا کہ سکول ہر سال سکیورٹی کی انتظامات کی مد میں ایک کروڑ روپے خرچ کر رہا ہے اور 32سکیورٹی گارڈ کو صبح اور شام کی شفٹ میں کام کرنے میں جبکہ سکول کی سی سی ٹی وی کیمروں سے بھی کڑی نگرانی کی جاتی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں