5کروڑکی لاگت سے ہڑپہ میں آڈیٹوریم کی تعمیرکا آغاز

ساہیوال (بیورورپورٹ )کمشنر ساہیوا ل ڈویژن علی بہادر قاضی نے کہا ہے کہ پاکستان دنیا کے ایک عظیم تہذیبی ورثے کا امین ہے جسے دنیا کے سامنے اجاگر کر کے ملک میں سیاحت کو فروغ دیا جا سکتا ہے ۔پنجاب حکومت نے 5کروڑ24لاکھ روپے کی لاگت سے ہڑپہ میں جدید آڈیٹوریم کی تعمیر شروع کر دی ہے جہاں سیاحوں کو وادی سندھ کی تہذیب سے متعلق آگہی دی جائیگی۔انہوں نے یہ بات اپنے دفتر میں ہڑپہ میوزیم سے متصل آڈیٹوریم اور دیگر سہولیات کے تعمیراتی منصوبے کے جائزہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ اجلاس میں ڈائریکٹر ڈویلپمنٹ حبیب جیلانی وینس اور میوزیم کے کیوریٹر محمد حسن بھی موجود تھے ۔اجلاس میں بتایا گیا کہ 2کروڑ روپے کی لاگت سے جدید آڈیٹوریم کی تعمیر شروع کر دی گئی ہے جہاں وادی سندھ کی تہذیب سے متعلق سیاحوں کو ڈاکومنٹری فلم دکھائی جاسکے گی ور انہیں اس پرانی تہذیب سے متعلق دیگر معلومات فراہم ہونگی جبکہ 3کروڑ روپے سے ہڑپہ کے کھنڈرات میں سیاحوں کو مزید سہولیات بھی فراہمی کی جائیں گی یہ منصوبہ دو سال میں مکمل ہو گا۔کمشنر نے ہدایت کی کہ تعمیراتی کام کے ڈیزائن سے ہڑپہ کی تہذیبی اقدار کی جھلک نظر آنی چاہیے تا کہ زیادہ سے زیادہ ملکی و بین الاقوامی سیاح آسکیں۔کیوریٹر محمد حسن نے بتایا کہ ہڑپہ تہذیب 5ہزار سال پرانی ہے اور ابتک برصغیر میں اس سے متعلقہ 400سے زائد مقامات پر آثار دریافت ہو چکے ہیں۔انہوں نے مزید بتایا کہ کھنڈرات کے اردگرد چاردیواری اور آڈیٹوریم کی تعمیر سے اس عظیم تہذیبی ورثے کو اقوام متحدہ کے ادارے یونیسکو کی ورلڈ ہیرٹیج لسٹ میں شامل کرنے میں بڑی مدد ملے گی جس سے ہڑپہ کے کھنڈرات کو محفوظ کرنے اور دنیا کے سامنے پیش کرنے میں آسانی ہو گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں