ڈاکٹر عاصم کا نام ای سی ایل سے نکالا جائے: سپریم کورٹ

اسلام آباد:‌سپریم کورٹ نے ڈاکٹر عاصم کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی ہدایت کرتے ہوئےتوہین عدالت کی درخواست نمٹا دی۔ڈاکٹرعاصم کی سیکرٹری داخلہ کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت جسٹس مشیر عالم اور جسٹس قاضی فائز عیسیٰ پرمشتمل بینچ نے کیس کی سماعت کی۔
ڈاکٹر عاصم کے وکیل لطیف کھوسہ نے کہا کہ عدالتی حکم کے باوجود ڈاکٹر عاصم کا نام ای سی ایل سے نہیں نکالا گیا۔
سیکشن افسر کے پیش ہونے پر اظہار برہمی کرتے ہوئے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ کیا بیوروکریسی کی جگہ سیکشن افسر حکومت چلائیں گے؟ شخصیات کے حساب سے معیار مختلف ہے ،کچھ لوگوں کو حکومت بالکل بھول ہی جاتی ہے، ای سی ایل میں نام شامل کرنا حکومت کی صوابدید ہے ، حکومت اپنا اختیار خود عدالت کے ہاتھ میں دیتی ہے ۔جسٹس مشیر عالم نے کہا کہ عدالتی وقت کا احساس کریں، بہتر ہوگا اپنا کام خود ہی کریں ۔
ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ ڈاکٹر عاصم کا نام ای سی ایل سے نکال دیا گیاہے ۔
عدالت نے کہا کہ مکمل صحت یابی کے بعد حکومت کو نام دوبارہ ای سی ایل میں ڈالنے کا اختیار ہے، بیرون ملک علاج کے لیے ٹرائل کورٹ سے اجازت لینا ہو گی۔جسٹس فائز عیسیٰ نے کہا کہ ایسا بھی نہیں ہونا چاہیے کہ نام نکلنے کے بعد ملزم ہمیشہ کے لیے باہر رہائش پذیر ہو جائے۔سپریم کورٹ نے ڈاکٹر عاصم کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی ہدایت کرتے ہوئے ڈاکٹر عاصم کی توہین عدالت کی درخواست نمٹا دی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں