بچوں کے قتل میں ملوث مبینہ ملزم سپریم کورٹ سے بری

اسلام آباد:سپریم کورٹ نے اپنے ہی چار بچوں کے قتل کے ملزم کو شک کا فائدہ دیتے ہوئےبری کردیا۔ جسٹس دوست محمد نے ریمارکس دیے کہانی ناقابل اعتبار ہے،استغاثہ کیس ثابت کرنے میں ناکام رہا۔ملزم عرفان کی درخواست بریت کی سماعت کرتے ہوئے جسٹس کھوسہ کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے قرار دیا کہ انصاف کی فراہمی کے لیے پولیس کو معاون کا کردار ادا کرنا چاہیے۔ماتحت عدالتوں کو تمام شواہد مدنظر رکھ کر فیصلہ کرنا چاہیے۔
جسٹس آصف کھوسہ نے ریمارکس دیے کہ مقتول بچوں کے منہ اور آنکھیں کھلی ہوئی تھیں۔اگر گواہان وہاں موجود تھے تو اخلاقی طور پر انہیں بچوں کے منہ اور آنکھیں بند کرنی چاہیے تھیں۔
عدالت نے شک کا فائدہ دے کر ملزم کو بری کرنے کا حکم دے دیا۔ملزم پر دوہزار نو میں تھانہ چٹیانہ ٹوبہ ٹیک سنگھ کی حدود میں اپنے چار بچوں کو قتل کرنے کا الزام تھا۔ٹرائل کورٹ نے ملزم کو چار بار سزائے موت سنائی جسے ہائی کورٹ نے بھی برقرار رکھا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں