7 گیارہ ایل کی ہیڈ مسٹریس کی اساتذہ سے بدسلوکی، شوہر کی مدد سے دھمکیاں

چیچہ وطنی: ( ظفراقبال انصاری سے) گورنمنٹ گرلز ہائی سکول چک نمبر7گیارہ ایل چیچہ وطنی کی ہیڈ مسٹریس نسیم اختر کا سٹاف ٹیچر کے ساتھ ناروا سلوک۔غیر متعلقہ افراد کی مدد سے خواتین اساتذہ کو دھمکانہ شروع کر دیا۔ 13سکول ٹیچزر نے ڈی ای او سیکنڈری ایجو کیشن ساہیوال سے ہیڈ مسٹریس اور غیر متعلقہ افراد کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کردیا۔ تفصیلات کے مطابق سکول مینجمنٹ کونسل نے ہیڈ مسٹریس کی جانب سے پیش کردہ چیک پر کے ممبر نے سائن کرنے سے انکار کیا اور سکول کے سٹاف نے ہیڈ مسٹریس نسیم اختر کی کرپشن اور بدعنوانی سے پردہ اٹھایا تو رنجش پر ہیڈ مسٹریس نے سکول ٹیچرز کو تنگ کرنے کے آئے روز نت نئے ہتھکنڈے اپنا نا معمول بنا لیا کمرہ جماعت میں بچوں کے سامنے بے عزت کرنا ہیڈ مسٹریس کا وطیرہ بن چکا ہے ۔ خواتین اساتذہ کے مطابق اب ہیڈ مسٹریس نے اپنے شوہر نجف علی کے ذریعے سکول سٹاف کو دھمکیاں دلوانا شروع کردی ہیں۔ہیڈ مسٹریس کا شوہر نجف علی اور چوکیدار ذوالفقار علی گاؤں کے باا ثر افراد کی مدد سے انھیں دھمکا رہے ہیں۔جن میں چوہدری شوکت علی سندھو نمایاں ہے÷ خواتین اساتذہ کا کہنا ہے کہ ہمارا صرف اتنا قصور ہے کہ ہم نے میڈم سے استفسار کیا تھا کہ انہوں نے سکول فنڈ کہاں خرچ کیا۔ذرائع کے مطابق مذکورہ ہیڈ مسٹریس نے جعلی اور بوگس رجسٹراور بوگس رسیدیں بھی بنار کھی ہیں ۔ جبکہ تین تناور درخت بھی کاٹ کر ہزاروں روپے خورد برد کرلیے ہیں۔سکول میں بچوں کے لیے سہولیات نہ ہونے کے برابر ہیں۔ سکول کی اساتذہ نگہت قربان ، فرزانہ شاہین ، افشاں شریف ، خالدہ پروین ، طاہر ہ تبسم ، حمیرا خانم ، شہرین اختر ، میمونہ اختر ، فرح ادیبا ، شگفتہ پروین ، کلثوم اختر ، ام فروا اظہر ، اقصی بیگم نے وزیر تعلیم پنجاب ، سیکرٹری تعلیم ، ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر سے اپیل ہے کہ ہمیں میڈم نسیم اختر کے ظلم و تشدد اور ناروا سلوک اور کرپشن سے بچایا جائے تاکہ بچوں کی تعلیم کا ہر ج نہ ہو۔

اپنا تبصرہ بھیجیں