ساہیوال، صاف پانی اور سیوریج سکیم میں کرپشن، 2 انسپکٹر گرفتار

ساہیوال(ایس این این) نیسپاک انتظامیہ نے ساہیوال میں 4ارب روپے کے پرا جیکٹ واٹر سپلائی ا ور سیوریج میں کر پشن اور ناقص کار کردگی کے الزامات میں دو انسپکٹروں عمار محبوب اورضیاء الرحمن کو نوکری سے بر طرف کر دیا۔واٹر سپلائی کے ٹھیکیداروں نے دو ارب روپے کی لاگت سے ساہیوال میں واٹر سپلائی کے پائپ کھدائی کے بعد بچھانے کا کام جاری ہے ٹھیکیداروں کے کارندے کھلے عام شہریوں سے تھڑے وغیرہ نہ توڑنے کے نام پر رقوم بٹور رہے ہیں ۔نیسپاک کے آفیسروں نے پرا جیکٹ ڈائریکٹر پنجاب کی ہدایت پر واٹر سپلائی کے ٹھیکیدار کو دو ارب روپے میں سے 84کروڑ روپے سے زائد کی ادائیگیاں کر دی ہیں جبکہ مو قع پر کام کی رفتار انتہائی سست روی کا شکار ہے اور28فیصد بھی کام نہ ہو سکا ہے۔آفیسر کالونی اور سکیم نمبر2میں گلیاں اور بازار کھدائی کے بعد دس یوم سے پندرہ یوم تک کھلے چھوڑ دئے جاتے ہیں جس سے ٹریفک میں دشواری پیداہورہی ہے ۔پنجاب حکومت کی ایک ٹیم نے سیوریج اور واٹر سپلائی تعمیر کے کام کیلئے آج مختلف مقامات کا معائینہ کیا اور ٹھیکیداروںکی واٹر سپلائی اور سیوریج کے کام کی سست روی پر سر زنش کی ۔شہریوں نے وزیر اعلیٰ پنجاب سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس پرا جیکٹ کی تعمیر کے کام کا خود نوٹس لیں اور ناقص کار کردگی کے ذمہ دار آفیسروں کے خلاف ایکشن لیا جائی

اپنا تبصرہ بھیجیں