ساہیوال، اسسٹنٹ ایجوکیشن افسر محکمہ تعلیم کے سفید ہاتھی

ساہیوال( ایس این این) محکمہ تعلیم ساہیوال کے اسسٹنٹ ایجوکیشن آفیسر محکمے کےلیے سفید ہاتھی بن گئے۔سکولز کے دوروں اور الاؤنسز کی مد میں لاکھوں روپے کی مراعات پانے کے باوجود کارکردگی صفر۔ اپنا نزل ہیڈ ٹیچرز پر گرانا شروع کر دیا۔ ذرائع کے مطابق محکمہ تعلیم ساہیوال کے اے او از کی اکثریت دفاتر سے غائب رہتی ہے اور فیلڈ دوروں کے نام پر لاکھوں روپے کا ٹی اے ڈے اے حاصل کرنے کے باوجود ان کی کارکردگی صفر ہے ۔ مختلف علاقوں کی لیڈی ہیلتھ وزیٹرز سے بچوں کی پیدائش کا ریکارڈ لے کر داخلہ ریکارڈ میں بچوں کے فرضی نام ڈالے جارہے ہیں اور اے اوز اس کام کے لیے گھر بیٹھے ہیڈ ٹیچرز کو دھمکا رہی ہیں۔ یہاں دلچسپ امر ہے کہ ہیڈ ٹیچرز کو صرف 500 روپے ہیڈ الاؤنس دیا جاتا ہے اور اصفائی سے لیکر دیگر کاموں اور ڈاک کا تمام بوجھ ہیڈ ٹیچرز پر ڈالا گیا ہے۔ ہیڈ ٹیچرز کو چھٹیوں میں بھی سکول آنے کا حکم جاری کیا گیا ہے جب کہ اے ای اوز گھر بیٹھے حکم نامے جاری کر رہی ہیں۔ ڈینگی مہم کے لیے بھی ہیڈ ٹیچرز کو ذمہ دار بنایا گیا ہے جب کہ آنے جانے کی مد میں کوئی رقم ادا نہیں کی جارہی۔ دوسری جانب اے ای اوز کو بھاری الاؤنسز دیے جارہے ہیں جبکہ ان کی کارکردگی جعلی کاغذات کے پلندوں کے سوا کچھ نہیں۔تعلیمی ماہرین نے ھخموت سے مطالبہ کیا ہے اے ای اوز کو سکولز میں بطور استاد تعینات کیا جائے ارو ان کی دفتری اسامی ختم کی جائے.

اپنا تبصرہ بھیجیں