ساہیوال، لیٹ میٹر ریڈنگ، شہریوں کو بجلی کے بھاری بل بھیج دیے گئے

ساہیوال(ایس این این) میپکو نے صارفین پر بجلی گرا دی۔مئی کے بلز میں اوور بلنگ۔4 مئی کی بجائے 11 مئی کو ریڈنگ کی گئی۔ مقررہ تاریخ کے بعد استعمال ہونے والے یونٹ پیک یونٹس کی صورت میں بل میں ڈال دئیے گئے۔ شہری پریشان۔ تفصیل کے مطابق میپکو کی مجرمانہ غفلت سے ہزاروں صارفین کو اوور بلنگ کی وجہ سے سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ ہر ماہ صارفین کو دو سو سے لے کر بارہ ہزار تک زائد یونٹس ڈال دیے جاتے ہیں جن کا بل ادا کرنا ان کی پہنچ سے باہر ہے۔بل کی عدم ادائیگی پر میٹر کاٹ کر صارفین کی مشکلات میں مزید اضافہ کیا جا رہا ہے۔مختلف علاقوں میں مقررہ تاریخ کی بجائے پانچ، چھے دن تاخیر سے ریڈنگ کی جاتی ہے۔ اس طرح صارفین کی جانب سے استعمال کی گئی بجلی کی قیمت بڑھ جاتی ہے۔ ایک صارف کی جانب سے بھیجے گئے بل میں دیکھا جا سکتا ہے کہ بل پر ریڈنگ کی مقررہ تاریخ 4 مئی تحریر ہے مگر میٹر ریڈر کی جانب سے واپڈا کو بھیجی گئی ریڈنگ کی تصویر پر 11 مئی درج ہے۔
اس طرح صارفین کو ان کے ماہانہ بجلی بل میں چند درجن یا چند 100 یونٹ اضافہ لگا کر بھیجے جاتے ہیں ،طریقہ کار یہ ہوتا ہے کہ میٹر ریڈرمقررہ تاریخ کے بجائے چند دن بعد میٹر کی ریڈنگ نوٹ کرتا ہے، بجلی کے بل پر میٹر ریڈنگ کی تاریخ مقررہ ہی درج کی جاتی ہے،دیر سے میٹر ریڈنگ لینے کے نتیجے میں300 سے کم یونٹ استعمال کرنیوالے صارفین 300 یونٹ سے تجاوز کرجاتے ہیں اور بجلی کے فی یونٹ نرخ بڑھ جاتے ہیں اسی طرح 7 سو یونٹ اور1ہزار سے کم یونٹ استعمال کرنے والے صارفین کے ساتھ کیا جاتا ہے۔نتیجے میں میپکو ہر ماہ کروڑوں روپے شہریوںکی جیب سے نکالنے میں کامیاب ہوجاتی ہے، یہی وجہ ہے کہ ہر سال کے الیکٹرک کے منافع میں کروڑوں نہیں اربوں کے حساب سے اضافہ ہورہا ہے، بجلی کمپنی کی ’’لوٹ مار‘‘ پر شہریوں کا کوئی پرسان حال نہیں،حکومت بھی خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے، شہر کو لاوارث چھوڑ دیا گیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں