یونیورسٹی آف ساہیوال میں نئے شعبوں کے لیے فنڈز کی منظوری

ساہیوال(بیورورپورٹ)کمشنر ساہیوال ڈویژن محمد احسن وحید نے کہا ہے کہ یونیورسٹی آف ساہیوال علاقے میں اعلی تعلیم کے فروغ میں اہم کردار ادا کر رہی ہے جس کی تمام ضروریات کو پورا کیا جائے گا اور مزید مالی وسائل کی فراہمی کو بھی ممکن بنایا جائے گا تا کہ نئے شعبے قائم ہوں اور نوجوانوں کو اعلی تعلیم کے بہتر مواقع میسر آ سکیں -انہوں نے یہ بات اپنے دفتر میں یونیورسٹی کی ضروریات اور مسائل کے حوالے سے ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی جس میں وائس چانسلر ڈاکٹر محمد ناصر افضل،ایڈیشنل رجسٹرار سید اصغر علی شاہ،اے ڈی سی ریونیو سید اسد رضا کاظمی اوراسسٹنٹ کمشنر سفیان دلاور نے بھی شرکت کی -اجلاس میں وائس چانسلر نے بتایا کہ ہائر ایجوکیشن کمیشن نے یونیورسٹی میں مزید شعبوں کے قیام کے لئے ایک ارب40کروڑ روپے کے ترقیاتی منصوبے کی منظوری دیدی ہے جس پر 3سالوں میں عملدر آمد ہو گا -وائس چانسلر نے یونیورسٹی کی مستقبل کی ضروریات پورا کرنے اور نئے شعبوں کے قیام کے لئے یونیورسٹی سے ملحقہ زمین الاٹ کرنے کی بھی درخواست کی جس پر کمشنر نے ہمدرانہ غور کا وعدہ کیا -انہو ں نے بتایا کہ پنجاب حکومت نے پچھلے 5سالوں میں یونیورسٹی کو کوئی گرانٹ نہیں دی اس لئے 98کروڑ80لاکھ کے ترقیاتی منصوبے کی منظوری دلائے جائے تاکہ نئے شعبے قائم ہو سکیں -انہوں نے مزید بتایا کہ یونیورسٹی میں میرٹ پر اساتذہ کی تقرری کر دی گئی ہے جس سے نہ صرف اساتذہ کی کمی دور ہوئی ہے بلکہ پی ایچ ڈی اساتذہ کی تعداد بھی 5سے بڑھ کر 47ہو گئی ہے جس سے مختلف شعبوں میں ایم فل اور پی ایچ ڈی کلاسز کا اجراء بھی ممکن ہو گا – کمشنر محمد احسن وحید نے مختصر عرصے میں یونیورسٹی کو فعال کرنے میں وائس چانسلر ڈاکٹر محمد ناصر افضل کی خدمات کو سراہا اور کالج چوک سے کمپری ہنسو چوک تک سڑک کا نام یونیورسٹی روڈ رکھنے کی اصولی منظوری دی –

اپنا تبصرہ بھیجیں