ساہیوال، صحافیوں کے ساتھ ملکر قومی خزانہ لوٹنے والے اہلکارروں کے خلاف مقدمات

ساہیوال(ایس این این) ڈی جی پی آر کے نام پر جعلی اکاؤنٹس کے ذریعے کروڑوں روپے خرد برد کر نے والے چار سر کاری ملازمین کیخلاف مقدمہ درج۔ تفصیلات کے مطابق ڈائریکٹر جنرل انفارمیشن پنجاب کے نام پرہڑ پہ اور ساہیوال میں جعلی اکاؤنٹس کھلو اکر کروڑوں رو پے غبن کا سراغ لگا کر انٹی کر پشن کے ڈائریکٹر شفقت اللہ مشتاق نے چار ذمہ دار سر کاری آفیسروں اور اہل کاروں محمدجا وید اکاؤنٹس ٓآفیسر،محمد سلیم ہیڈ کلرک،سب ڈویژنل ھیڈ کلرک عابد حسین ،ہائی وے ساہیوال کے جو نئیر کلرک محفوظ علی اور ان کے ایک کارندے محمود خالد چو ہدری کے خلاف اطلاع ملی کہ ساہیوال کے دو مقامی اخباروں کے ساتھ کام کر نے والے محمود خالد چو ہدری اور محمد علی بخاری ڈی جی پی آر لاہور کے نام پر اخباروں کیلئے اشتہارات بک کر والیتے ہیں اور جب اخبارات میں اشتہارات شائع ہو جاتے ہیں تو اس کے بعد ان شتہارات کے ڈپلیکیٹ بل بنا کر لاکھوں رو پے کے بل ان دو جعلی اکاؤنٹس کے ذریعے ہڑپ کر جاتے ہیں ۔
اس سلسلہ میں محمود خالد چو ہدری اور محمد علی بخاری نے ایک دوسرے کے خلاف در خواستیں دے کر خودا یک دوسرے کا بھانڈا پھوڑ دیا ۔جس کے بعد ڈائریکٹر انٹی کر پشن نے انکو ائری کرائی تو محکمہ ہائی وے کے اہل کار بھی ملوث پائے گئے اور لاکھوں کے بلوں کی ادائیگیاں کر کے سر کاری خزانہ کو گز شتہ تین سال کے دوران ڈیڑھ کروڑ روپے سے بھی زائد کا غبن پایا۔جس پر انٹی کر پشن ساہیوال نے انکوائری میں جرم ثابت ہونے پر پانچ سر کاری اہل کاروں اور ایک اخبار کے کارندے کے خلاف مقدمہ471,468,420,409ت پ اور5.2/47پی سی اے درج کر لیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں