ہسپتالوں کے نظام میں خرابی قابل برداشت نہیں: کمشنر ساہیوال

ساہیوال(بیورورپورٹ)کمشنر ساہیوال ڈویژ ن ندیم الرحمن نے کہا ہے کہ غریب عوام کو صحت کی بنیادی سہولیات کی فراہمی موجودہ حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے اور موجودہ مالی سال کے دوران 45ارب 50کروڑ روپے کی خطیر رقم مریضوں کے بہتر علاج پر خرچ کی جائے گی -ہسپتالوں میں صفائی کا نظام درست کرنا،خراب مشینوں کو فوری ٹھیک کرانا اور ڈاکٹروں کی موجودگی انتہائی ضروری ہے جس میں کوئی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی -انہوں نے یہ بات اپنے دفتر میں ساہیوال میڈیکل کالج اور ڈی ایچ کیو ٹیچنگ ہسپتال سے متعلقہ بریفنگ سے خطاب کرتے ہوئے کہی جس میں ایڈیشنل کمشنر ایس ڈی خالد کے علاوہ پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر محمد طارق،ایم ایس ڈاکٹر بشارت سعید اورڈائریکٹر فنانس محمد علیم نے بھی شرکت کی -انہوں نے ڈی ایچ کیو ہسپتال میں مریضوں کو فراہم کی گئی طبی سہولیات پر اطمینان کا اظہار کیا تاہم ہدایت کی کہ وارڈز میں خراب ہونے والے ایئر کنڈیشنرز،پنکھوں اور لائٹس کو فوری ٹھیک کروایا جائے اور وارڈز کی عمومی صفائی پر مکمل توجہ مرکوز رکھی جائے -انہوں نے کہا کہ کسی بھی وارڈ میں طبی مشینر ی خراب رکھنے کی قطعا اجازت نہیں دی جا سکتی اور انتظامیہ خراب مشینوں کو فوری درست کروائے تا کہ عوام کے علاج معالجے میں بہتری آسکے -اجلاس میں پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر محمدطارق نے بتایا کہ 2014سے اب تک 5سالوں میں ہسپتال میں آنے والے مریضوں کی تعداد دگنی سے زائد ہو چکی ہے جبکہ طبی عملے میں کوئی اضافہ نہیں ہو ا جس سے ہسپتال کے وسائل پر بہت زیادہ بوجھ ہے -انہوں نے بتایا کہ اضافہ بلاک کی تعمیر سے ہسپتال میں بیڈز کی تعداد 377سے بڑھ کر 1150ہو جائے گی -انہوں نے مزید بتایا کہ ہسپتال میں ماہانہ 30ہزار مریضوں کو او پی ڈی میں چیک کیا جارہا ہے جبکہ 13ہزار 8سو سے زائد مریض مختلف وارڈز میں داخل کر کے انہیں علاج کی مکمل سہولیات فراہم کی جا رہی ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں