ساہیوال،2وکلاء کاسیشن جج کی عدالت میں ہنگامہ اور توڑ پھوڑ

ساہیوال (بیورورپورٹ) دووکلاء کا ڈسٹرکٹ سیشن جج کی عدالت میں ہنگامہ‘ فائلیں پھاڑڈالیں ‘فرنیچر کی توڑپھوڑ‘ ملزمان کے خلاف دہشتگردی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج۔ تفصیلات کے مطابق ڈسٹرکٹ اینڈسیشن جج ساہیوال رانامسعود اختر کی عدالت میں 9بجے صبح تقریباً بلال سعید ایڈووکیٹ اورمفتی امجد ایڈووکیٹ ایک مقدمہ محمد ارشد اقبال بنام سرکار میں پیش ہوئے اورمعززجج سے غلیظ زبان استعمال کی اورعدالت کو دھمکیاں دیں اور ہاتھاپائی ہوئی۔ اطلاع ملنے پر ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر غلام مبشرمیکن اوردیگرپولیس افسران بھاری نفری کے ہمراہ موقع پرپہنچے۔ ایف آئی آر کے مطابق مذکورہ وکلاء نے 6/7نامعلوم افراد کے خلاف غلیظ زبان استعمال کرتے ہوئے عدالتی مقدمات کی فائلیں پھاڑڈالیں‘فرنیچر کی توڑپھوڑکی اورسائلین کوڈرادھمکا کر مارپیٹ کرکے عدالت سے باہرنکال دیا۔ وجہ عناد یہ ہے کہ مذکورہ وکلاء کے کلائنٹ ندیم کوعدالت نے ٹاؤٹ قراردیکراحاطہ عدالت سیشن کورٹ میں داخلہ ممنوع قراردیاتھا جس کاملزمان کورنج تھا۔ پولیس تھانہ سول لائن نے نائب کورٹ محمدیونس کی رپورٹ پر ملزمان کے خلاف مقدمہ 7اے ٹی اے‘ 506/186‘ 353/427 اور 148‘ 149 ت پ کے تحت مقدمہ درج کرلیا ہے۔اس سلسلہ میں ڈسٹرکٹ بار کے صدر چوہدری محمدانور سے رابطہ کیا گیا تو انہوںنے کہاکہ معاملہ غلط فہمی کی بنیاد پر ہواہے افہام و تفہیم سے حل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں