اساتذہ پاکستانی کی نظریاتی اساس پر طلبا کی تربیت کریں: ڈی سی ساہیوال

ساہیوال (بیورورپورٹ ) ڈپٹی کمشنر میاں محمد زمان وٹو نے کہا ہے کہ مسلمانوں نے تعلیم و تربیت میں معراج پا کر دنیا میں سربلندی حاصل کی لیکن جب انہوں نے تعلیم کے مواقعوں سے خود کو دور کیا تو ان کا زوال شروع ہو گیا۔دین اسلام کی ابتدا ہی اقرا ء سے ہوئی اور اساتذہ کو چاہیے کہ وہ پاکستان کی نظریاتی بنیادوں کو سامنے رکھ ایک ایسی تعلیم یافتہ نسل کو پروان چڑھائیں جو ہمارے افراد اور معاشرے میں پُل کا کام انجام دے سکے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گورنمنٹ قائد اعظم اکیڈمی فار ایجوکیشنل ڈیویلپمنٹ میں ورلڈ لٹریسی ڈے کی مناسبت سے منعقدہ ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر سی ای او ایجوکیشن محمد ذوالفقار ،ڈی ای او لٹریسی میڈم شازیہ اقبال اور پاکستان تحریک انصاف کے ضلعی رہنما ملک محمد یار ڈھکو کے علاوہ ماہرین تعلیم، لٹریسی ڈیپارٹمنٹ کے سوشل موبلائزر ز اورنان فارمل سکولوں کے ٹیچرز بھی کثیرتعداد میں موجود تھے ۔انہوں نے کہا کہ آج کے پر آشوب اور تیز ترین دور میں معیاری تعلیم کا حصول بنیادی تقاضا ہے جس کے بغیر ملکی ترقی کا خواب کسی صورت میں بھی شرمندہ تعبیر نہیں ہوسکتا۔انہوں نے کہا کہ معیاری تعلیم سے ہی قومیں عروج حاصل کرتی ہیں اور تعلیم کے فروغ سے ہی پستی اور غلامانہ ذہنیت کی تخم ریزی ہوتی ہے جبکہ لاعلمی سے نہ صرف ماضی کھو جاتا ہے بلکہ مستقبل بھی دائو پر لگ جاتا ہے ۔ڈپٹی کمشنر میاں محمد زمان وٹو نے اساتذہ کرام پر زور دیا کہ وہ جدید تعلیم کے ساتھ ساتھ بچوں کی کردار سازی بھی کریں تا کہ انہیں مستقبل کے چیلنجز سے نبردآزما ہونے کیلئے تیار کیا جا سکے ۔سیمینار سے دیگر شرکاء نے بھی خطاب کیا۔اس سے قبل اپنے خطبہ استقبالیہ میں ڈسٹرکٹ آفیسر لٹریسی میڈم شازیہ اقبال نے لٹریسی ڈیپارٹمنٹ کے اغراض و مقاصد اور کارکردگی سے متعلق ایک تفصیلی بریفنگ بھی دی ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں