افغان نائب صدر عبدالرشید دوستم کے قافلے پر خودکش حملہ

کابل(ایس این این ) افغان نائب صدر عبد الرشید دوستم کے قافلے پر خود کش حملہ، 10 افراد ہلاک تاہم نائب صدر محفوظ رہے. عبدالرشید دوستم ترکی میں جلا وطنی ترک کر کے آج حامد کرزئی ایئرپورٹ کابل پر پہنچے جہاں اعلیٰ حکام اور حامیوں کی بڑی تعداد نے ان کا استقبال کیا تاہم جیسے ہی نائب صدر کا قافلہ اپنی منزل کی جاب روانہ ہوا ایک زوردار دھماکے سے فضا گونج اٹھی جس کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔
دھماکا اتنا زوردار تھا کہ ایئرپورٹ کے تمام شیشے ٹوٹ گئے اور ہر طرف افرا تفری مچ گئی۔ ریسکیو ادارے نے امدادی کاموں کا آغاز کردیا ہے۔ اب تک 10 لاشیں اسپتال لائی جاچکی ہیں جب کہ 40 سے زائد زخمیوں کو داخل کیا گیا ہے جن میں سے 12 کی حالت نازک بتائی جارہی ہے۔ اسپتال انتظامیہ نے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔
عبدالرشید دوستم کو 2014 میں افغانستان کا پہلا نائب صدر منتخب کیا گیا تھا تاہم انہیں جنگی جرائم کے باعث 2017 کو کابل کو خیر باد کہنا پڑا تھا۔ اس کے باوجود ان سےعہدہ واپس نہیں لیا گیا تھا۔ افغان صدر اشرف غنی کی درخواست پر عبدالرشید دوستم ترکی میں ایک سال سے زائد عرصے کی جلاوطنی کی زندگی ختم کرکے کابل پہنچے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں