پاکستان میں مردوں اور عورتوں کی تعداد برابری کے قریب

ساہیوال(ایس این این )معروف سوشیالوجسٹ پروفیسر جلیل بٹ نے کہاہے کہ پاکستان میں مردوں اور عورتوں کے درمیان بڑھتاہوا سماجی ‘معاشی اور سیاسی تفاوت پاکستانی معاشرہ کو ترقی کی بجائے زوال کی طرف لے جارہاہے۔2017 مردم شماری کے مطابق مردوں کی تعداد10کروڑ64لاکھ49ہزار 322ہے اورعورتوں کی تعداد 10 کروڑ 13 لاکھ 14 ہزار 780ہے جبکہ صوبہ پنجاب کی آبادی کی صورتحال میں مردوں کی تعداد5کروڑ 59لاکھ 58ہزار974 اور عورتوں کی تعداد5کروڑ40لاکھ46ہزار759 ہے جو معمولی فرق ہے۔ سہولیات ‘مراعات ‘ملازمتوں میں کوٹہ اور اجرتوں میں امتیازی سلوک روا رکھا جاتاہے۔ وہ یہاں یونیورسٹی طلباو طالبات کے ایک سیمینار سے خطاب کررہے تھے۔انہوں نے کہاکہ پاکستان میں دیہی عورتوں کی بڑی تعداد امتیازی سلوک ‘جبر اور استحصال کاشکار ہے ۔ خصوصی طورپر پراپرٹی کی ملکیت انصاف تک رسائی اور پر تشدد واقعات نے عورتوں اور مردوں کے درمیان تفاوت ختم کرنے کی تمام کوششوں کونقصان پہنچایاہے۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ ضلعی سطح پر وویمن ایمپاور منٹ سنٹر قائم کئے جائیں ۔ عورتوں کی موثر شمولیت سے فیصلہ سازی کی جائے اور فور ی طورپر سوشل پالیسی بنائی جائے تاکہ عالمی اہداف حاصل کرکے پاکستان کو دنیا میں بہتر کردار اداکرنے کا موقع ملے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں